مکروہات روزہ صوفیہ امامیہ نوربخشیہ

مکروہات روزہ


وَ یَکْرَہُ اَنْ یَّطْلُعَ الصُّبْحُ وَ ھُوَ جُنُبٌ وَ اَنْ یَّحْتَقِنَ بِالْجَامِدِ وَاَنْ یُّدْخِلَ الدُّھْنَ اَوْ شَیْئًا مِّنَ الْاَدْوِیَۃِ فِیْ الْاُذُنِ وَالْاَنْفِ مَعَ اَنَّھَا لَمْ تَتَعَدَّ مِنَ الْحَلْقِ وَ اَنْ یَّمْضَغَ طَعَامًا لِلطِّفْلِ وَ اَنْ یُّبَاشِرَ النِّسْوَانَ تَقْبِیْلًا اَوْ لَمْسًا اَوْ مُلَاعَبَۃً۔ وَاَنْ یَّکْتَحِلَ بِمَا فِیْہِ مِسْکٌ اَوْ شَیْیٌٔ نَافِذٌ وَ اَنْ یُّخْرِجَ مِنْ جَسَدِہِ دَمًا بِالْفَصْدِ وَغَیْرِہِ لَوْ کَانَ مُضْعِفًا وَ دُخُوْلُ الْحَمَّامِ کَذَالِکَ وَلَابَأْسَ بِشَمِّ النَّرْجِسِ وَ الرَّیَاحِیْنِ وَ الْوَرْدِ وَسَائِرِالْعِطْرِیَاتِ وَلَا بِالْجُلُوْسِ فِی الْمَائِ ذَکَرًا کَانَ اَوْ اُنْثٰی وَ لَا بِبَلِّ الثَّوْبِ عَلَی الْجَسَدِ۔
۱۔ صبح طلوع ہوجائے اور وہ جنابت کی حالت میں ہو۔ ۲۔ ٹھوس چیزسے حقنہ کرانا ۔ ۳۔کان اور ناک میں تیل یا دوائو ں میں سے کوئی چیز ڈالنا اگرچہ یہ حلق سے گزر نہ بھی جائے۔۴۔بچے کے لئے کھانا چبانا۔ ۵۔بیوی کو بوسہ دے کر، چھو کر یا کھیل کود کر لطف اندوز ہونا۔ ۶۔کستوری یا دوسری نفوذ والی چیز وں سے سرمہ لگانا ۔ ۷۔فصد وغیرہ کے ذریعے جسم سے خون نکالنا بشرطیکہ یہ کمزور نہ کر دے۔ ۸۔حمام میں داخل ہونا بھی اسی طرح ہے ۔ نرگس ،ریحان اور گلاب اور دیگر تمام خوشبوئوں کو سونگھنے میں کوئی حرج ہے نہ ہی پانی میں بیٹھنے میں ،مرد ہو یا عورت ۔ نہ ہی جسم پر کپڑوں کو گیلا کرکے رکھنے میں کوئی حرج ہے۔